Youth Awareness












2013 is going to be the election year in Pakistan. There is a lot of political hip hop in Pakistan at the moment. Pakistan People’s Party has been in power for a record 5th time in history of Pakistan and have ruled us in last five years. Looking at the inflation, unemployment, war on terror impacts on Pakistanis and especially the energy crisis in Pakistan, PPP has failed miserably in governance. Imran Khan has become a self proclaimed messiah of the doomed nation in the mean time. I have impartially considered him to see if he deserves my vote, and the answer my analysis as a layman brings forward is a big NO. Here are my reasons to say No to Imran Khan’s Change.

  • Imran Khan a rolling stone???

Pakistanis have loved Imran Khan deeply. There were slogans like “Lion of Pakistan, Imran Khan, Imran Khan” in the 1980s which I remember from my childhood. What was the back ground? Did Imran present the country’s budget? No. Was it some meeting with a foreign delegation for future direct investment? No. Was he involved in preparing the country’s defence plan? No. Then what was the source of love and respect he gained? Oh now I remember. He was a sportsman. One of the best ones in his field. He is from a family of cricketers, and he has spent 45 years of his life becoming an expert in Cricket. One fine day he decides to sort out the social, legal, governance, health, poverty, employment and defence related problems of Pakistan and that makes me laugh. A person who has all his life’s experience in Cricket considers himself better for running a country? Too optimistic and kiddish. Is Imran a rolling stone not? Who will gather no moss?

  • Imran Khan’s language-do I want my representative to speak like he does nowadays?

Not at all. With power comes responsibility. This is especially true if you are an elected member of national assembly. A person who ridicules his opponents (well till the time they remain his opponents) with language not worthy of it, how will he treat the people if he ever comes in power? What happened to the decent Imran Khan we knew? Or was the “Finally “I” managed to win the world Cup” speech is just his nature? His language is most definitely my reason of NOT voting for him.

  • Imran Khan’s focus-why is it adjusted on Punjab only?

One major thing that makes me believe Imran Khan is not a good choice for my vote is his extreme focus on Punjab. An unbiased review of the performance of all 4 provinces in last 5 years will prove that Punjab Government has launched a lot many projects for public benefit in comparison to the other 3 provincial governments and the federal government put together. In Punjab the 2010 floods were tackled much better in terms of relief in comparison to Sindh where flood water of 2010 is still standing in some low lying areas. Im sure Punjab can be run much better than this, but in the given circumstances it still happens to be the most well managed province in Pakistan. Why Imran Khan is NOT concerned about any other part of Pakistan? The people dying in target killings daily in Karachi are not Pakistanis? The Hazara shias being killed in Quetta are not Muslims? The people killed by Taliban and other extremists in KPK are not Humans? Why is his concern and criticism only focused on Punjab? Makes me believe Imran has no plan for Pakistan. Whatever he is planning is only for Punjab. This makes him unfit to get my vote as premiere of Pakistan.

  • Imran’s politics is too bookish

Pakistan is a complex socio-political region. We are not simple people to deal with. There are forces like religion, economics and social pressures of very different kinds that shape our daily lives. I find Imran Khan’s solution to our problems very bookish. Who in his right senses would claim he would end the war on terror on his first day in office? Or that he can root out corruption in this culture within 9 days?  This society is no Europe or USA. Imran seems to know very little about the nation he claims to be the savior of.

  • Imran’s followers and their “holier than thou” attitude

Something is wrong with Imran and his followers. I searched for information myself but couldn’t find any information related to how Imran Khan earns. Also, it looks like he never filed a tax return all his cricketing life. Amazing is the fact that Imran still points out others for not paying taxes. What can you think of a person who does not follow a rule, but wants others to follow? I do not want a person with this double standard to be my leader. Imran’s followers have every right to like him, but no right to disrespect other leaders. They follow Imran and use foul language. They go to the level that they declare you a non patriot if you don’t like Imran. Is Imran some kind of “farz”? No. And this attitude is trickling down from his own person to his followers. He considers himself better for no reason and after committing the same mistakes others do, he screams at top of his voice what others are doing. Again. Kiddish. Again, NO!

  • Imran’s zana case, and allegations on SKMH funds misuse

Being a Muslim do I really want a playboy of his youth to be my leader? No. Imran had an illegitimate daughter borne to Sita White. The kid in now in guardian custody of Jemima James, Imran’s ex wife. Though the court in USA has declared her to be Imran’s daughter where Sita White won the parental rights case against Imran, Tyrian Khan’s eyes are enough proof of her being Imran’s daughter. Being a playboy all his life, he has had a lot of illegal relationships out of wedlock with a number of women. The story does not end here. Imran Khan proves himself to be a hypocrite when he points fingers at others for looking at a woman. A recent press conference where he demanded from Nawaz Sharif the PML (N) chief to confirm if he has been loyal with his wife is something disgusting. This s disgusting not because of the cheapness of question, but because of the fact that the cheapest of all playboys is asking the question! Imran, a hypocrite-NO to him yet again!

Recently Khwaja Asif from PMLN has brought forward this issue of funds of zakat from SKMH being invested outside Pakistan. The information comes from the audit report of SKMH, so it cannot be a scam. SKMH is a great initiative by Imran Khan which he achieved by th support of all Pakistan. Doesn’t we deserve an explanation about this funds misuse? No explanation till now. Zakat funds CANNOT be used for investment. I have been donating to SKMH till this issue came to limelight and no one has ever asked me at SKMH collection booths about the money if it is zakat or not. The funds received are thus a mix of zakat and other donations and cannot and must not be misused. Imran can betray the people who stood by him for making this hospital a reality. Imran can take the credit of winning the World Cup alone when it was a squad of 16 who did it. Imran can betray his mother’s name in SKMH scams. Is he trust worthy then? NO.

  • Imran has no plan but allegations and statements only

Whenever I have tried to see Imran Khan’s point of view from a neutral point of view I have always found he has no plan. He knows nothing about how things work in Pakistan. All he can do is bringing forward more and more allegations. This style of work might be good for a Star Plus daily Soap but Pakistan for sure needs better workable plans. He brings forward allegations, claims to have proofs, never brings forward the proofs. So, is it all a hoax? Looks like that other wise he would have shown something-anything which can be considered as a proof in last 15 years. Indecent attitude- A big NO to Imran Khan.

  • Finally, Imran’s Team and his Change

Since we started having general elections in Pakistan, we have seen Kasuris, Tareens. Legharis-What’s new then? Where is the change? Just that we have to vote for the same person under a new party name and that is all? A Kasuri we have had in parliament some five times and now he is being introduced as a CHANGE? Imran Khan really considers Pakistanis to be idiots, isn’t it the case?

So, what do I say to a rolling stone, who uses indecent language, is focused only on one province out of four, offers bookish solutions, with a proven zana case and SKMH funds allegation still carries that “holier than thou” attitude, is all about allegations and no proofs and promises to bring change by bringing back all so familiar faces to the national assembly-A big NO!

Imran Khan does not deserve my Vote. That’s my analysis. I respect everybody’s views. Respect mine as well.

MAJID TAMOOR – Our Youth



{August 17, 2012}   Who is Behind Kamra Attack ?

On August 16, one of the largest air bases in Pakistan, the Minhas air base located at Kamra in Central Punjab some 45 miles northwest of Islamabad, was attacked by Islamist militants as reported in the media. During the dark hours of the night they barged in from a nearby village with rocket-propelled grenades and automatic weapons wearing suicide bombing vests and disguised as military personnel. The Commandos of Pakistan Army were successfully able to counteract the aggression that went on for about eight hours and it resulted in the loss of one Pakistani soldier, damaged one aircraft and injured the base commander, Air Commodore Muhammad Azam.

Nine extremists have been reported dead during the scuffle which the Pakistani Taliban claimed was part of their plan for a long time. They are known for targeting different military sites in the Country to uproot Pakistan military’s strength, but have failed at every single time as the military intelligence is alert. According to Pakistan Air Force spokesman, Captain Tariq Mahmood, the Minhas air base at Kamra does not store nuclear weapons, contrary to the earlier media reports. In fact, he revealed that no air base in Pakistan has any nuclear weapons. The Minhas air base has several squadrons of fighter jets, including JF-17 fighter jets and surveillance planes and was declared clear after the search operations for any hiding militants were over.

The fact that it is located adjacent to the Pakistan Aeronautical Complex, which is a major air force research and development center, has made some analysts suspicious of Pakistan military’s readiness to such expected militant retaliations. However, this is not the first time that suicide bombers have launched attacks at the site, as in 2007 and 2009 the same place came under their threat. This latest one at Kamra could be seen as a result of the offensive Pakistan Army has declared for the tribal belt recently. The U.S. State Department did not seem to be perturbed in
its trust on Pakistan military’s capability, especially keeping with the recent improvement in their relations with Pakistan Army and believes the site being free of nuclear weapons.

Thus, these militants were made to think that it was a nuclear-armed air base by the enemies of Pakistan who want to destabilise it and show that Pakistani nukes are not in safe hands. Tracing back their such perception, it implies that the India’s Research and Analysis Wing (RAW) and Israel’s Institute for Intelligence and Special Operations, commonly known as Mossad, might have been behind instigating such havoc. It is clearly beyond the means of Pakistani Taliban to
exploit the Minhas air base and might be part of higher tactics against Pakistan military. Both RAW and Mossad has been insistent on claiming Pakistani nukes unsafe.

The Pakistani nation can take pride in Pakistan military that it has been able to shift the terrorist attacks away from innocent civilians as the decline in the terrorist incidents amongst the civilian population across Pakistan has been significant. Although, it could be seen as a tactical shift in the Pakistani Taliban’s strategy against Pakistan military, but never the less, the people have been rightfully protected by their saviours.

Pakistan’s Defence Minister, Naveed Qamar, has acknowledged the preparedness with which the Commandos defended the air base. It should not be taken as a security lapse, but rather as a proof of how prepared Pakistan military is round the clock. Pakistan Air Force has also released many images of the Kamra attack incident to the media as there is nothing to hide as suggested by those suspicious of Pakistan military’s ability to safeguard its people, its territory and its nukes.

Courtesy : Pak Soldiers

 




بسم اللہ الرحمن الرحیم

آئے دن رپورٹ ہوتی ہے کہ آج ایک پاکستانی نے فلاں کارنامہ/ایجاد کر کے پاکستانیوں کا سر فخر سے بلند کر دیا۔ کئی بار مجھے لگتا ہے کہ بالکل معمولی معمولی باتوں پر ہمارے سر فخر سے بلند اور اسی طرح معمولی سی بات پر شرمندگی سے جھک بھی جاتے ہیں۔ پنجابی کی ایک کہاوت ہے کہ ”چڑی موترے تے کانگ“ یعنی چڑیا پیشاب کرے تو سیلاب۔ جب لوگ معمولی معمولی باتوں سے بڑے بڑے نتائج اخذ کرنے لگ جائیں تو وہاں یہ کہاوت بولی جاتی ہے۔ ہمارے ہاں کیا عجب تماشہ لگا ہوا ہے۔ جیسے معمولی سی بات پر ہمارا سب کچھ خطرے میں پڑ جاتا ہے بالکل ویسے ہی ”چڑی موترے“ تو ہمارے سر فخر سے بلند ہو جاتے ہیں۔ ہو سکتا آپ لوگوں کو میری ان باتوں پر غصہ آ رہا ہو لیکن کبھی ہم نے اپنے میڈیا، انقلابیوں اور ”ایجادیوں“ پر غور کیا ہے کہ انہوں نے کیا تماشہ لگا رکھا ہے؟ میڈیا کی رپورٹوں پر غور کریں تو صاف اندازہ ہوتا ہے کہ یہ سارے نہیں تو کم از کم نوے فیصد ”بلنڈر“ ضرور ہیں۔ اگر کوئی حقیقت بیان کرے تو یار لوگ کیا کہتے ہیں اس پر ایک علیحدہ تحریر ہو گی۔ فی الحال موضوع کچھ اور ہے۔

ہاں تو میں بات کر رہا تھا، میڈیا اور ایجادیوں کی۔ میڈیا اور ایجادیوں کے تماشوں کی چند مثالیں دیتا ہوں اور ساتھ میں حقیقت کیا ہے اس کی وضاحت کرنے کی کوشش بھی کرتا ہوں۔ کچھ عرصہ پہلے غالباً پچھلے رمضان (2011ء) میں ایک صاحب جیو نیوز چینل پر آئے اور اتنے دھڑلے سے جھوٹ بول رہے تھے کہ جن کو دیکھ کر شرمائیں یہود و ہنوز۔ بات قرآن پاک کے تلاش والے اردو سافٹ ویئر کی کر رہے تھے کہ یہ پہلا سافٹ ویئر ہے، اس جیسا آج تک نہیں بنا، یہ امت مسلمہ کو میری طرف سے رمضان میں تخفہ ہے۔ اگر لوگ تعاون کریں تو میں اس سے زیادہ اچھا اور احادیث کا سافٹ ویئر بھی بنا دوں گا (لنک)۔ اینکر کامران خان نے اس بات پر انہیں پتہ نہیں امت مسلمہ کا کیا کیا بنا دیا۔ حد ہو گئی یار۔ ٹھیک ہے آپ نے قرآن پاک کا سافٹ ویئر بنایا ہے۔ اچھا کام کیا ہے لیکن اتنے جھوٹ تو نہ بولو اور جنہوں نے تم سے پہلے کئی ایک زبردست سافٹ ویئر بنائے ہیں اور بغیر کسی دنیاوی لالچ کے ان کو دیوار سے تو مت لگاؤ۔ آپ کو بتاتا چلوں کہ یہ کوئی زاہد حسین نامی صاحب تھے اور ان سے پہلے کئی ایک اور ان کے سافٹ ویئر سے زیادہ معیاری سافٹ ویئر موجود ہیں، جیسے ایزی قرآن و احادیث اور نور ہدایت وغیرہ۔

آج کل ہمارے ملک کا ایک بہت بڑا مسئلہ بجلی کی لوڈ شیڈنگ ہے، گویا اس بارے میں ایک چھوٹی سی شرلی چھوڑ دو تو سارے کام ہو جاتے ہیں۔ کچھ عرصہ پہلے ایک رپورٹ دیکھی جس میں ایک صاحب ٹیوب ویل کے پانی کے بہاؤ سے بجلی بنا رہے تھے اور نتیجہ میں ایک ایل ای ڈی (LED) روشن تھی۔ صاحب فرماتے ہیں کہ اگر حکومت تعاون کرے تو میں ملک کو بجلی کے بحران سے نکال سکتا ہوں۔ او خدا کے بندے پہلے جو تربیلا اور منگلا پاور ہاؤس چل رہے ہیں وہ بھی تو اسی تکنیک پر چل رہے ہیں تو تو نے کونسا نیا تیر مارا ہے۔ ویسے بھی کئی ہارس پاور کی موٹر سے، تو ٹیوب ویل چلا رہا ہے اور پھر نتیجہ میں ایک ایل ای ڈی۔ حد ہو گئی جہالت کی۔ اس طرح کی ایل ای ڈی تو جتنی وہی ٹیوب ویل والی موٹر حرارت چھوڑ رہی ہے، اس سے جلائی جا سکتی ہے۔ ویسے بھی پانی کے بہاؤ کی حرکی توانائی سے بجلی بنانے کے ایک ہزار ایک طریقے دنیا میں رائج ہیں تو پھر تو نے کونسی نئی تکنیک ایجاد کی جس وجہ سے تو اتنا اترا رہا ہے۔ کبھی کبھی سوچتا ہوں کہ میں بھی اپنے ٹیوب ویل پر ایسا ”پروجیکٹ“ تیار کروں بلکہ ہمارے پاس تو اتنا بڑا دریائے چناب ہے۔ سو دو سو روپے کا ایل ای ڈی چلانے والا چھوٹا سا جنریٹر مل جائے گا، بس پھر پانی سے اسے گھماؤ گا اور مشہور ہو جاؤں گا، لیکن مسئلہ یہ ہے کہ میڈیا پر آنے کے لئے ایک کنال زمین بھیجنی پڑے گی کیونکہ میرے پاس نہ تو کوئی سفارش ہے اور نہ ہی اتنے پیسے۔

ایک رپورٹ میں تھا کہ ایک صاحب نے جدید قسم کا جنریٹر تیار کر دیا۔ وہ صاحب کر یوں رہے تھے کہ انہوں نے گاڑی کی ڈِگی میں ایک بیٹری رکھی ہوئی تھی اور اسے گاڑی کے جنریٹر سے چارج کر رہے تھے۔ پھر اس بیٹری کے آگے انورٹر لگا کر پنکھا چلا رہے تھے۔ کر لو گل! ہو گیا جدید قسم کا جنریٹر تیار۔ یہ رپورٹ دیکھ کر میرا دل کر رہا تھا کہ زور زور سے چیخیں ماروں، اپنے میڈیا کی جہالت پر ماتم کروں اور میڈیا والوں کو کہوں کہ خدا کا خوف کرو، پہلے ہی دنیا میں ہماری بڑی بے عزتی ہو رہی ہے اب اس انداز سے تو نہ کرواؤ۔ اگر یہ رپورٹ کسی دوسرے ملک کے اردو سمجھنے والے، تھوڑے سے تکنیکی بندے نے دیکھ لی تو وہ ہر فورم پر ہماری جہالت پر ہنسے گا، کیونکہ ایسے کام اب بچوں کا کھیل ہیں اور تم اسے ”جدید قسم کا انوکھا جنریٹر“ کہہ رہے ہو۔

پچھلے دنوں ایک صاحب کا بہت چرچا ہوا جن کے دے انٹرویو پر انٹرویو اور رپورٹوں پر رپورٹیں کہ جناب نے پانی سے گاڑی چلائی ہے۔ میں اور میرے دوست غلام عباس نے سوچا ہو سکتا ہے کہ اس نے پانی میں سے آکسیجن اور ہائیڈروجن علیحدہ علیحدہ کرنے کا کوئی نیا اور زبردست طریقہ ایجاد کر لیا ہو۔ خیر ہم اس بندے کو ملنے گئے۔ سارا دن کی کھجل خرابی کے بعد اس کے گاؤں پہنچے۔ کھودا پہاڑ اور نکلا چوہا۔ کوئی پانی سے گاڑی نہیں چل رہی تھی بلکہ وہی انیسویں صدی والی تکنیک استعمال کر کے بالکل معمولی سی ہائیڈروجن حاصل کی جا رہی تھی جو پٹرول کے ساتھ ملا کر جلائی جا رہی تھی تاکہ انجن کی تھوڑی طاقت زیادہ ہو جائے۔ اب پتہ نہیں طاقت زیادہ ہوئی بھی تھی یا نہیں لیکن پانی سے انجن/گاڑی چلانے والا سیدھا سیدھا جھوٹ تھا۔ مجھے یہ تو معلوم نہیں کہ میڈیا نے اس کی اتنی جھوٹی تشہیر کیوں کی لیکن اس بندے سے مل کر ایک بات واضح ہوئی کہ وہ بندہ بذاتِ خود بہت اچھا تھا، درد دل رکھنے والا انسان ہے اور پاکستان کے لئے کچھ کرنا چاہتا ہے۔ اس نے خود میڈیا کے بارے میں کہا کہ انہوں نے ہمیں بہت تنگ کیا ہے۔ باقی اس نے خود مانا کہ پانی سے گاڑی نہیں چلائی جا رہی بلکہ مجھے انجن کی تھوڑی زیادہ طاقت چاہئے تھی تو میں نے اس کے لئے ہائیڈروجن والا طریقہ سوچا۔ مگر ہمارے میڈیا نے تو وہ گاڑی سو فیصد پانی سے چلوا دی تھی۔

پچھلے دنوں ایک اور شور مچا ہوا تھا کہ سوات کے نوجوان نے پانی سے جنریٹر چلا کر بجلی بنا دی۔ جس میں کہا گیا کہ اس نے پانی سے انجن چلایا اور پھر اس انجن سے بجلی بنانے والی ڈینمو گھمائی۔ اب ایک اور شوشا بڑے عروج پر ہے، اس بار تو حد ہی ہو گئی۔ وزیراور بڑے بڑے اینکر اور تو اور کئی اہم شخصیات جیسے ڈاکٹر عبدالقدیر خان اور پاکستان کونسل آف سائنٹیفک اینڈ انڈسٹریل ریسرچ (PCSIR) کے چیرمین ڈاکٹر شوکت پرویز بھی اس کھیل میں اس ”شوشے“ کے حق میں کود چکے ہیں جبکہ ڈاکٹر عطاء الرحمٰن فی الحال اس ”ایجاد“ کو کچھ اس طرح نہیں مان رہے کہ ان کا خیال ہے کہ ایک تو اس کی اچھی طرح جانچ ہونی چاہئے اور دوسرا یہ کہ اس طرح پانی سے گاڑی چلنا ناممکن ہے کیونکہ یہ سائنس کے بنیادی اصول توانائی کی ایک حالت سے دوسری میں تبدیلی اور تھرموڈائنامکس کے پہلے قانون کے خلاف ہے۔

پانی سے گاڑی چلانے والے بندے آغا وقار کا کہنا ہے کہ بس اس کی بنائی ہوئی ”واٹر کِٹ“ میں صرف خالص پانی ڈالتے جاؤ تو گاڑی چلتی رہے گی۔

میں سائنس کا کوئی ”راکٹ سائنس“ طالب علم نہیں مگر حیران ہوتا ہوں کہ ایسی معمولی باتیں میں جانتا ہوں تو ان ”وڈے“ لوگوں کو کیا نہیں پتہ، یا کہیں ایسا تو نہیں کہ ”سب مایا ہے“ کیونکہ یہ جو پانی سے انجن چل رہے ہیں اس طریقے کی تفصیل تو میڑک کا طالب علم بھی آسانی سے سمجھ سکتا ہے۔

خیر آپ کو اس کی تھوڑی سی حقیقت بتانے کی کوشش کرتا ہوں۔

پانی سے انجن چلانے کے لئے فی الحال صرف ایک طریقہ ہے کہ پانی کی برق پاشیدگی (Electrolysis) کی جائے اور اس میں سے ہائیڈروجن حاصل کر کے اسے ایندھن کی جگہ انجن میں جلایا جائے یا پھر کسی اور طریقے سے اسی ہائیڈروجن کو استعمال میں لایا جائے۔ اس میں کوئی شک نہیں پانی سے ہائیڈروجن حاصل کر کے اس سے انجن چلایا جا سکتا ہے اور ہمارے ”ایجادیئے“ ایسا ہی کر رہے ہیں، مگر سوچنے والی بات یہ ہے کہ پانی سے ہائیڈروجن حاصل کرنے پر کتنی توانائی لگے گی اور نتیجہ میں ہمیں کتنی توانائی ملے گی؟ ہائیڈروجن حاصل کرنے پر جتنی لاگت آئے گی کیا موجودہ ایندھن جیسے ڈیزل اور پٹرول وغیرہ سے سستی ہو گی؟

اس طریقے میں سب سے پہلا مرحلہ ہے پانی کی برق پاشیدگی۔ توانائی کے سائنسی اصولوں کے مطابق اگر سب کچھ آئیڈیل ہو تو پانی کی برق پاشیدگی پر جتنی توانائی خرچ ہو گی، پانی سے حاصل ہونے والی ہائیڈروجن آگسیجن کے ساتھ جل کر اتنی ہی توانائی دے گی۔ عام طور پر پانی کی پاشیدگی کے لئے بجلی کا استعمال ہوتا ہے۔

پہلی بات تو یہ کہ دنیا میں فی الحال ایسے آئیڈیل حالات تیار نہیں ہوئے لہٰذا جتنی توانائی برق پاشیدگی پر لگے گی اس کا کچھ حصہ حرارتی اور دیگر توانائی کی اقسام میں تبدیل ہو جائے گا اور یوں حاصل ہونے والی ہائیڈروجن جتنی توانائی دے گی اس سے زیادہ توانائی برق پاشیدگی اور دیگر کاموں پر پہلے ہی لگ چکی ہو گی۔ دوسری بات یہ کہ فرض کریں کسی نے کوئی آئیڈیل حالات بنا بھی لئے ہوں (جوکہ کم از کم زمین پر فی الحال ناممکن کے قریب تصور کیا جاتا ہے) تو پھر بھی جتنی توانائی پانی کی برق پاشیدگی پر لگاؤ گے نتیجہ میں اتنی ہی توانائی ہائیڈروجن کو جلا کر حاصل ہو گی۔ اب آپ ہائیڈروجن سے انجن چلا کر اس سے گاڑی کا پہیہ گھماؤ یا پھر بجلی بنانے والی ڈینمو، یہ آپ کی مرضی مگر پانی کو توڑنے (پاشیدگی) پر جتنی توانائی لگا رہے ہو اتنی ہی توانائی حاصل کر پاؤ گے۔

اب جیسے پاشیدگی کے لئے بجلی کا استعمال ہوتا ہے تو اگر سب کچھ آئیڈیل ہو تو پھر برق پاشیدگی سے حاصل ہونے والی ہائیڈروجن کو استعمال کرتے ہوئے ہم اتنی ہی بجلی بنا پائیں گے جتنی کہ برق پاشیدگی پر لگائی تھی۔ قابل غور بات یہ ہے کہ جتنی بجلی لگائی، اتنی ہی حاصل ہوئی۔ اسی طرح اگر ہم انجن چلانے کے لئے پانی کی پاشیدگی پر جتنی بجلی لگاتے ہیں اگر اتنی ہی بجلی سے موٹر چلائیں تو وہ بھی انجن جتنا ہی کام کرے گی۔

پانی سے ہائیڈروجن حاصل کر کے انجن تو چل گیا مگر ہائیڈروجن حاصل کرنے پر جو بجلی لگائی ہے وہ کہاں سے آئے گی؟ اس بجلی کی جتنی قیمت ہو گی کیا اس سے سستی ہائیڈروجن ویسے ہی مارکیٹ سے نہیں مل جائے گی؟ کیا ہائیڈروجن کی ٹرانسپورٹ موجودہ ایندھن (پٹرول اور ڈیزل) جتنی آسان ہو گی؟ کیا ہائیڈروجن سے سستا ایندھن پہلے موجود نہیں؟

جب ہم ان سوالوں کے جواب ڈھونڈنے نکلتے ہیں تو پتہ چلتا ہے کہ پانی کی برق پاشیدگی کرنے والے طریقے پر موجودہ ایندھن کی نسبت زیادہ خرچ آتا ہے اور اس طریقے سے سستے اور آسان طریقے پہلے ہی دنیا میں رائج ہیں۔ عام لوگ بس یہی دیکھتے ہیں کہ لو جی پانی سے انجن/گاڑی چل گئی مگر کوئی یہ نہیں دیکھتا کہ پانی کو کن کن مراحل سے گزارا گیا ہے اور اس پر خرچہ کتنا آیا ہے۔ آج کل جو بندہ آغا وقار بڑا مشہور ہوا ہے میرا اس بندے سے سوال ہے کہ
پانی کی برق پاشیدگی پر جو بجلی لگ رہی ہے وہ کہاں سے آئے گی؟
جواب:- گاڑی میں موجود بیٹری سے۔
گاڑی کی بیٹری کیسے چارج ہو گی؟
گاڑی کے جنریٹر سے۔
جنریٹر کیسے گھومے گا؟
گاڑی کے انجن سے۔
انجن کیسے چلے گا؟
ہائیڈروجن سے۔
ہائیڈروجن کہا سے آئے گی؟
پانی کی برق پاشیدگی سے۔
پانی کی برق پاشیدگی کیسے ہو گی؟
بجلی سے۔
بجلی کہاں سے آئے گی؟
گاڑی کی بیٹری سے۔
افف ف ف ف ف ف ف۔۔۔ یا میرے خدا ہم پر رحم کر۔
آپ سوچ رہے ہوں گے کہ میں نے خود ہی سوال کیے اور خود ہی جواب لکھ دیئے۔ مگر ایسا نہیں سوال میرے ہیں جبکہ جواب آغا وقار کے ہی ہیں کیونکہ وہ یہ جواب مختلف پروگراموں میں دے چکا ہے۔ خیر آغا وقار کے بنائے ہوئے نظام میں صرف ہمیں پانی ڈالنا ہے۔ بس پھر گاڑی کی بیٹری سے پانی کی برق پاشیدگی ہو گی اور پھر عمل چالو ہو جائے گا یعنی ایک چکر چل پڑے گا جس میں صرف پانی ڈالتے جاؤ۔ یقین کرو اگر واقعی ایسا ہوا تو پوری دنیا بدل جائے گی اور اس طریقے سے دنیا بدلنے کی کوشش سو دو سو سال پہلے ہی سیانے لوگ کر کے تھک ہار چکے مگر آغا وقار :-)

یارو! تیاری پکڑو! بس اب اس بندے آغا وقار کے حق میں بولنے یعنی اس کی ”ایجاد“ کو ماننے والے یعنی سب سے پہلے ہمارا میڈیا اور پھر ڈاکٹر عبدالقدیر خان، ڈاکٹر شوکت پرویز اور کئی وڈے لوگوں کی واٹ لگنے والی ہے کیونکہ انہوں نے آن دی ریکارڈ سب کچھ کہا ہے :-) یا پھر سائنس ایک بہت اہم موڑ پر پہنچ چکی ہے اور ایسا ”یوٹرن“ لے گی کہ ساری کائنات ”ٹرنوٹرن“ ہو جائے گی۔ آج کی فزکس منہ کے بل گرے گی۔ فزکس کے تمام نوبل انعام آغاوقار کو مل جائیں گے اور یہ دنیا کا سب سے بڑا سائنسدان کہلائے گا۔ یورپ، امریکہ اور ساری دنیا پاکستان کی مقروض ہو جائے گی۔ شاید آپ کو یہ باتیں مذاق لگ رہی ہوں مگر جناب اگر آغا وقار کے طریقے سے گاڑی چل گئی اور صرف پانی سے چلتی رہی تو پھر واقعی یہ دنیا کی عظیم ترین ایجاد میں سے ایک ہو گی اور اس سے واقعی دنیا بدل جائے گی۔ (دیوانے کا خواب)

خیر میں تو کہتا ہوں کہ اس بندے آغا وقار کو سخت سے سخت سیکیورٹی میں رکھا جائے کیونکہ اگر اسے کچھ ہو گیا تو لوگوں نے کہنا ہے کہ دیکھا ایک ”عظیم سائنسدان“ کو مروا دیا گیا ہے۔ خیر اس کے بنائے ہوئے نظام کی مکمل جانچ کی جائے اور فراڈ ہونے کی صورت میں اس کی بجائے ہمارے میڈیا کو الٹا لٹکا کر لتر مارنے چاہئے جو بغیر تحقیق کے باتیں کرتے پھرتے ہیں اور اس جیسے بندے کو اتنا منہ زور کر دیتے ہیں کہ وہ اچھے بھلے ڈاکٹر عطاء الرحمن کی بے عزتی کرتا پھرتا ہے۔ اور اگر یہ واقعی سچ ہوا تو پھر لات مارو پوری فزکس کو اپنی نئی فزکس تیار کرو۔ مجھے پورا یقین ہے کہ ایک عام پاکستانی اس بات پر بڑا جذباتی ہو رہا ہے کہ دیکھو ایک پاکستانی سے کتنی بڑی ایجاد کر دی۔ اے میرے پاکستانی بھائیو! خدارا کچھ ہوش کے ناخن لو۔ ہر چیز کو جذبات کے آئینے سے نہ دیکھا کرو بلکہ حقیقت کو پہچانو۔

دنیا میں بہت کچھ نیا ہوا ہے۔ سائنس نے کئی جگہوں پر یوٹرن لیا ہے۔ مگر یہ بندہ آغا وقار جو دعوہ کر رہا ہے اس پر میرا ذاتی خیال پوچھو تو میں اس طرح پانی سے گاڑی چلنے والی بات کو نہیں مانتا کیونکہ میری تحقیق کہتی ہے کہ ایسا نہیں ہو سکتا، یاد رہے پانی سے گاڑی چل سکتی ہے مگر اس پر خرچہ ڈیزل یا پٹرول سے زیادہ آتا ہے۔ باقی پھر کہوں گا کہ میں سائنس کا کوئی ”راکٹ سائنس“ طالب علم نہیں اس لئے میں غلط بھی ہو سکتا ہوں۔ اجی میں کیا ہوں، اب تو جو صورت حال بن چکی ہے وہاں تو اچھے اچھوں کی واٹ لگنے والی ہے۔ مگر شرط ہے کہ آپ لوگ نہ بھولیے گا۔

میرا مقصد مایوسی پھیلانا یا اپنے پیارے پاکستانیوں کے کارناموں کو غلط ثابت کرنا نہیں، بس یہ کہتا ہوں، اللہ کا واسطہ ہے کہ پہلے کوئی کارنامہ کرو تو سہی۔ ”ایجادی“ کی بجائے موجد بنو۔ جاہل میڈیا کے بل پر عام عوام کو جاہل نہ بناؤ۔ ”کارنامے“ بلکہ میں تو انہیں کرتوت کہوں گا، کرتوت ایسے ہیں کہ جن پر سینہ چوڑا کرنا تو دور کسی کو بتاتے ہوئے بھی شرم آتی ہے۔

دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ ہم پاکستانیوں کو عقل دے اور ہم حقیقی معنوں میں کچھ ایجاد کر دنیا کو حیران کر دیں اور اپنے ملک کو ترقی دیں۔۔۔آمین

 

 

 



et cetera
%d bloggers like this: