Youth Awareness











{February 29, 2012}   Mohajir identity – Ali Chishti

Supporters of Muttahida Quami Movement attend a rally in Karachi

In my book tracing the origins of the word, Mohajir, I wrote, “the word Mohajir (capital M) is vaguely traced to the 1970s and 80s, when the persecution of people of Indian ancestry gained momentum. It simply stated, when the Punjabis started calling them “HindustaaNRaan”, and the Pathans and Sindhis labelled them as “Panah Guzeer” and “Makars”, the immigrants started calling themselves “Mohajirs”, since they cannot really relate with the other four ethnicities.

Article Box

Article Box

Now, the word with the capital M has come to symbolise, correctly or incorrectly, all people who came from minority provinces of India or are the descendants of those immigrants. For me however the word “Mohajir” is not an honorific title or something to complain about – it’s simply a statement of being from somewhere else. In fact, “Ansaar” is a more positive word which means “those who help” which is something similar to democratic ideals vs democratic party. Similarly when the white Americans were searching for all kinds of nomenclature for African Americans (Negros, coloured people, and worse) these African Americans chose to call themselves “Black” Americans.

But there’s a serious identity crisis within the Mohajir community be it a general in the army or a ‘babu’ at the foreign office, or a butcher in Orangi town – it’s a community in search of its roots because in all ‘practicality’ and there’s a strong feeling that the ‘Mohajirs’ had been rejected by other ethnicities in Pakistan. Later, Altaf Hussain, the man who is credited to have given the Mohajirs a somewhat-political identity in a book titled “Safar-e-Zindagi” published in 1989, described Mohajirs as “those who migrated from smaller provinces of undivided Hindustan to Pakistan”.

The Partition was something no-one really wanted and it only became inevitable when the Congress leadership rejected the Cabinet Mission Plan after initially accepting it.

Mohajir identity has evolved through the years and transformed from being a right-wing Jamaat-e-Islami or JUI supported movement to a centrist ethno-political identity

Jinnah, the Quaid-e-Azam, could do no more than to console his countrymen, “We have been squeezed in as much as was possible and the latest blow that we have received is the Award of the Boundary Commission. It is an unjust, incomprehensible and even perverse Award. It may be wrong, unjust and perverse; and it may not be a judicial but a political award, but we have agreed to abide by it and it is binding upon us. As honourable people we must abide by it. It may be our misfortune but we must bear up this one more blow with fortitude, courage and hope.” Mohajirs migrated from as far as Calcutta, Malabar, Aurangabad, Amritsar, Patna and Ahmadabad and other Muslim minority provinces leaving not just “everything” but “everyone” behind.

Pakistan originally envisioned by Iqbal had no Bangladesh but only consisted of what is Pakistan now. The leadership of Pakistan later made sure that Pakistan would transform from Jinnah’s Pakistan to Iqbal’s Pakistan resulting in yet another partition that ruined the ideological basis on which the first Partition took place. And that is why the 1971 setback hurt the Mohajirs.

And there are warnings more such partitions are likely if the status quo does not change. Many Mohajirs, Sindhis, the Baloch, Pathans, and even Kashmiris will reach the point of no return. Islam could not eventually become a unifying factor for East and West Pakistan.

The 18th Amendment had been a good start of a new social contract which is not ground-breaking, but a start nevertheless.

Be it a general in the army or a ‘babu’ at the foreign office, or a butcher in Orangi town – it’s a community in search of its roots

But to save, Pakistan we need full provincial autonomy and nothing else. We should realise the gravity of situation in Baluchistan, Pakhtunkhua and Sindh where million’s are dying of hunger and the frustration against the state is at its height. Perhaps we need to take a breather, reflect on the situation, consider all our options, and then have a polite national debate, without the use of force, riots, Rangers, or street power, to decide if and how we can live together, or if we should go our separate ways.

During his rule, Zulfikar Ali Bhutto began to crush his opposition within Sindh. He started “Sindhisation” campaign and introduced the Language Bill in 1973-1974 making Sindhi language compulsory for all students in Sindh, a move which caused rioting in Sindh. During nationalisation move, Mohajirs believe only the businesses they owned were targeted. Similarly, they say the quota system deprived the deserving Mohajir the right to get into universities and jobs and hundreds of less educated and less competent people were appointed as schoolteachers.

The army inspired action against Mohajirs in the 1990s led to an exodus of many talented families from Karachi/Hyderabad. Hundreds and thousands of educated boys and girls were forced to migrate. They now feel secure and have no desire to return, and that leads to the impending problem with Karachi and Pakistan in general – the loss of valuable human capital. In what was called “Operation Clean-up”, more than 15,000 Mohajirs were murdered in extra-judicial killings in Karachi alone. Women were raped and were even seen carrying the bodies of their dead male relatives. The operation also ruined the economy of Karachi.

In an interesting study I carried out about Mohajir identity at various colleges and educational institutions for my upcoming book tracing the roots of Mohajir political movement and identity, 73% of adult student’s identified themselves as Mohajir first and Muslim second. This shows that Mohajir identity has evolved through the years and has transformed from being a right-wing Jamaat-e-Islami or JUI supported movement to a centrist or a left-wing ethno-political identity which surpasses religious identity. The MQM – which has now transformed into ‘Muthida’ but is in fact a Mohajir-centric party made to safeguard the rights of Mohajirs in Urban Sindh – is a clear example of this new identity.

And while the word Mohajir remains controversial and often used by lower classes, the middle and upper classes in the community tend to classify themselves as “Urdu Speaking”. For them, the term Mohajir represents the “hateful past”.

During my research work, I met MQM Rabbita Committee’s Kunwar Khalid Younas – one of the soft faces of MQM – who has been writing in English for years defending the MQM and coining or using terms like the “Urdu Speaking Community” or USC. But one sub-community, the Memons, do not agree, because Urdu is not their first language.

So where does the Mohajir identity stand today, and has it become weaker or stronger with time? Statistics of ethnic violence show that in a very polarised Karachi, Mohajir nationalism or identity has become stronger, except in the middle class.

The real issues that Pakistan faces today are poverty, illiteracy, and violation of human rights. And the people of Pakistan must realise that these are the issues political decisions should be based on. Mohajir nationalism will only weaken when the sense of equality and justice is restored in the society.

Ali Chishti is a TFT reporter based in Karachi. He can be reached at akchishti@hotmail.com 

Advertisements



منیر احمد فردوس

شروع سے سنتے آئے ہیں کہ جب گیدڑ کی شامت آتی ہے تو وہ شہر کا رخ کرتا ہے مگر میں نے کبھی شہر میں کوئی گیدڑ نہیں دیکھا بلکہ ہر طرف شوہر ہی دیکھے ہیں، اس لئے یہ کہا جا سکتا ہے کہ جب کسی مرد کی شامت آتی ہے تو وہ سر پر سہرا سجا لیتا ہے، جسے عرفِ عام میں شادی کرنا کہتے ہیں۔ شادی اور شامت دونوں  ”ش” سے شروع ہوتے ہیں اس لئے دونوں کا مقصد اور اثرات بھی ایک جیسے ہی ہوتے ہیں بس فرق صرف اتنا ہے کہ شامت میں آدمی خود اپنے پائوں پر کلہاڑی مارتا ہے جبکہ شادی میں اس کا پورا خاندان اس پر وار کرتا ہے۔یعنی مرد کو شادی کے نام پر مرد چوسنے والی ایسی ”چوسنی مخلوق” کے پلے باندھ دیا جاتا ہے جسے بیوی کے نام سے پکارا جاتا ہے۔یہ واحد خود کفیل مخلوق ہے جس کا قحط آج تک نہیں پڑا اور یہ دنیا کے ہر خطے میں خودرو گھاس کی طرح اگتی ہے۔
الطاف حسین حالی نے کہا تھا کہ دنیا کی اصل خوبصورتی عورت کی وجہ سے ہے۔ پہلے میں بھی یہی سمجھتا تھا مگر جب عورت کے نام پر ایک عدد بیوی گھر لایا تو اندازہ ہوا کہ الطاف حسین حالی نے یقیناً نظام شمسی کے کسی اور سیارے کی عورت کو اس کی خوبصورتی کہا تھا۔مگر افسوس کہ الطاف حسین حالی نے اس سیارے کا نام نہیں بتایا۔ پہلے دن سے ہی بیوی نے کامیاب وارکر کے گھر کا چین سکون چوس لیا۔پہلے میری آنکھ پڑوسیوں کے گھر میں ہونے والی لڑائی سے کھلتی تھی اور اب ان کی آنکھ میرے گھر میں ہونے والی لڑائی سے کھلتی ہے بلکہ جس دن لڑائی نہ ہو تو لوگ عیادت کو پہنچ جاتے ہیں۔ایک  مولوی صاحب نے کہا تھا  کہ انسان کا دشمن شیطان ہے، اس سے بچ کے رہو گے تو زندگی آرام سے گزرے گی، مگر شادی کے بعد احساس ہوا کہ شیطان کا تو یوں ہی نام بدنام ہے، اصل کارنامے تو بیوی کے ہیں۔ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ شیطان نے اپنی جنس اور نام تبدیل کر کے بیوی رکھ لیا ہو یا یہ بھی ممکن ہے کہ جس مولوی نے ایسا کہا تھا وہ کنوارا ہو۔مجھے جلیبی اور بیوی کی نیت میں کبھی فرق نظر نہیں آیا۔نئے ملبوسات، زیوارت، فیشن، پرفیوم، جوتے، میک اپ کا سامان، شاپنگ، بیوٹی پارلر کے چکراٹے، غرض کون سی ایسی فرمائش ہے جو میں نے پوری نہ کی ہو مگر پھر بھی بات بات پر طعنہ، لڑائی اور دھمکیاں میرا مقدر بن گئیں۔ ہر اس آدمی سے کہا جس نے میر ی شادی میں شرکت کی تھی کہ مجھے میری بیوی سے بچائو مگران سب کی بھی ایسی ہی حالت تھی۔دوسرے خاوندوں کا اس بات پر ایمان ہو یا نہ ہو مگر میراتو پکا  ایمان ہے کہ کچھ لوگوں کو اپنے گناہوں کی سزا اس دنیا میں ہی مل جاتی ہے۔ طالب علموں کو گناہوں کی سزا بھاری بھرکم بستوں کی صورت میں اور شوہر کو سزا بیوی کی صورت میں مل رہی ہے۔شادی سے پہلے میں مال گنا کرتا تھا اور اب سر کے بال گنتا ہوں۔میں ان شوہروں سے ضرور گذارش کروں گا جن کے بال ابھی تک فخر سے سینہ تانے کھڑے ہیں کہ ہمیشہ بیوی کے لئے نرم تلے والے جوتے لایاکریں بلکہ گر ہوائی چپل ہی لیا کریں تو ان کے بالوں کی عمر بیوی کی طرح لمبی ہو سکتی ہے۔ بیوی کا خرچ بند کیا تو اس کے آنسوئوں کے لشکر نے خرچہ دوبارہ جاری کروادیا اور میں یہ کہنے پر مجبور ہوا کہ بیوی کے آنسو کا ایک قطرہ مرد بیچارے کی تنخواہ کے ساتھ ساتھ اس کی مردانگی بھی بہا کر لے جاتا ہے۔بیوی شادی سے پہلے معصوم پرندہ اور شادی کے بعد خونخوار درندہ بن جاتی ہے، جس کی نظر اور ہاتھ صرف جیب اور بالوں پر ہی ہوتےہیں۔اس درندے کی نظر اتنی طاقتور اور تیز ہوتی ہے کہ اسے چھ فٹ کا شوہر نظر نہیں آتا مگر تین انچ کی جیب دور ہی سے نظر آ جاتی ہے۔
بیوی کی کئی قسمیں ہوتی ہیں یعنی صحافی بیوی، سیاسی بیوی، صحافی بیوی، لڑاکا بیوی، کڑاکا بیوی، چالباز بیوی، جھوٹی، ڈرامہ باز، اور ڈرائونی بیوی۔مختلف اقسام کی بیویاں ہونے کے باوجود سب کا ایک ہی کام ہوتا ہے، گھر کو میدان ِ جنگ بنا کربیچارے شوہرکے ساتھ جنگ کرنا۔ اس لئے یہ حقیقت ہے کہ مرد کے لئے شادی کی رات خوشیوں کی آخری رات ہوتی ہے۔ میں نے ایک عامل سے بھی کہا کہ ”محترم! مجھے میری بیوی سے بچائو”۔ اس نے کہا ”اگر میری بیوی نہ ہوتی تو آج میں بھی عامل نہ ہو تا۔اگر تمہارے اوپر جن سوار ہو جاتا تو میں اسے سیکنڈوں میں اتار دیتا، مگر تمہارے اوپر بیوی جیسی مخلوق سوار ہے، جس سے میرے تمام مئوکل ڈرتے ہیں،بلکہ وہ تو خود اپنی بیویوں سے بھاگ کر میرے پاس آئے ہیں۔بیوی سے تمہیں اب صرف عزرائیل ہی نجات دلا سکتاہے۔”
میرا اب یہ تجزیہ ہے کہ شادی کے بعد رنگین مرد غمگین ہو جاتا ہے اور بیوی کی صورت میں اسے غموں کی ایسی پوٹلی ملتی ہے، جس کے ہر غم میں ہزاروں غم چھپے ہو تے ہیں جس میں سب سے بڑا غم یہی ہوتا ہے کہ بیوی اپنے شوہر کی تمام جائیداد و املاک میں برابر کی حصہ دارہوتی ہے، سوائے غم و الم کے۔ اس لئے بیوی کی تعریف بھی شاید یہی ہے کہ ”وہ عورت جو شادی کے بعد دل جلاتی ہو نہ کہ ساتھ نبھاتی ہو۔”
ایک عدد بیوی پالنے کے بعد اب میرا ذاتی تجربہ یہ ہے کہ شادی کا صرف ایک ہی فائدہ ہے کہ خود کشی کرنے کے لئے رسی نہیں خریدنی پڑتی۔ آخر پر ایک نصیحت میں ان شوہروں کو کرنا چاہوں گا جو بیوی آلود ہو چکے ہیں”اے پاکستانی خاوندو! بیوی کو مضبوطی سے باندھے رکھو، تاکہ تم میری طرح سے یہ کہنے پر مجبور نہ ہو جائو کہ “مجھے میری بیوی سے بچائو”۔

 




US Efforts to encourage old heritage

امریکی سفارتخانے کی جانب سے فیس بک پر دئے گئے ایک اشتہار، یو ٹیوب پر موجود ویڈیوز اور امریکی سفارتخانے کی ویب  سائٹ پر موجود معلومات سےانکشاف ہوتا ہے کہ پاکستان میں قدیم ہندو رسوم اور انتہائی متنازعہ امور کو پھیلانے اور مقبول بنانے کے لئے  امریکی سفارتخانہ   گزشتہ دس  برس سے ہر سال کروڑوں ڈالر خرچ کررہا ہے۔ امریکی سفارتخانے کا موقف ہے کہ پاکستان جس خطے میں موجود ہےاور جو علاقے پاکستان میں شامل ہیں وہاں  ماضی میں انتہائی  ترقی یافتہ قومیں آباد تھیں اور  ان کا ایک کلچر تھا جو اس علاقے کا اصل کلچر ہے اور امریکی سفارتخانہ اس قدیم اور اصل کلچر کو بحال کرنے کے لئے کوشاں ہیں۔ امریکی سفارتخانے کی ویب سائٹ پر دئے اعدادوشمار سےپتہ چلتا ہے کہ امریکی سفارتخانہ ایسے 17 متنازعہ ترین پروجیکٹس پر کام کررہا  ہے اور ان کے لئے فنڈز فراہم کررہا ہے جس سے پاکستانی معاشرے میں انتشار مزید پھیل رہا ہے، ان سترہ پروجیکٹس میں اکثر قدیم ہندو اور بدھ  مت رسوم اور تہواروں پر مشتمل ہیں اور پاکستانی معاشرے میں حال  ہی میں انہیں زور و شور سے منانے پر محاذ آرائی شروع ہو چکی ہے۔ امریکی سفارتخانے کی ویب سائٹ کے مطابق ان میں سے ایک بسنت و بہار نامی تہوار ہے۔ ا مریکی سفارتخانے کا کہنا ہے کہ یہ اس خطے کا قدیم تہوار اور ثقافت ہے اس لئے وہ اسے معاشرے میں رائج کرنے اور محفوظ کرنے کے لئے فنڈز فراہم کررہا ہے۔ انہیں سترہ پروجیکٹس میں  قدیم بدھ   دیوتائوں کے بت، قدیم مندر اور  دیگر  ایسے علاقائی تہوار شامل ہیں جو اب معدوم ہوچکے ہیں اور اگر انہیں بحال کیا جاتا ہے تو اس سے براہ راست پاکستانی تشخص اور  اسلامی کلچر پر اثر پڑتا ہے۔ امریکی سفیر کا  ایک کہنا ہے کہ وہ پاکستان کی نہیں بلکہ علاقائی ثقافت کو محفوظ بنانے کے لئے کام کررہے ہیں اور انہیں اس کی اجازت اقوام متحدہ کا چارٹر دیتا ہے۔

امریکی سفارتخانے کی جانب سے فیس بک پر دئیے گئے اشتہار کا عکس امریکی سفارتخانے کی جانب سے فیس بک پر دئیے گئے اشتہار کا عکس



et cetera
%d bloggers like this: